Sports Setup
Every Thing about Sports

This website uses cookies to improve your experience. We'll assume you're ok with this, but you can opt-out if you wish. Accept Read More

The Viability of a PTI-Supported Government Formation - Sports Setup
Sports Setup
Every Thing about Sports

The Viability of a PTI-Supported Government Formation

0

In the wake of the recent general elections, independent candidates endorsed by the Pakistan Tehreek-e-Insaf (PTI) have surpassed expectations, outshining all other political factions. This development has sparked widespread speculation about their ability to coalesce and establish a new central government.

Barrister Gohar Ali Khan, a prominent figure within the PTI, has voiced concerns over the election’s integrity, alleging that the results were manipulated to benefit the Pakistan Muslim League-Nawaz (PML-N). He revealed that prior to these allegations of electoral tampering, the PTI was poised to secure 170 seats in the National Assembly. The party has expressed its determination to pursue legal channels to address these grievances.

This controversy follows closely on the heels of PML-N’s Nawaz Sharif’s proclamation of victory, where he identified his party as the dominant force in both the Center and Punjab, based on the election outcomes dated February 8. While Sharif’s assertion of PML-N’s preeminence post-election holds merit, it’s crucial to note the unique circumstances under which PTI participated in the election. The party had to field independent candidates due to its inability to conduct internal elections in time, resulting in the loss of its electoral symbol.

Presently, PTI-endorsed independents command 100 seats in the National Assembly, with PML-N trailing at 73, and the Pakistan Peoples Party (PPP) holding 54 seats out of a total of 266. When accounting for the 70 reserved seats, the assembly’s capacity expands to 336 seats, setting the majority threshold at 169 seats.

Ahmed Bilal Mehboob, President of the Pakistan Institute of Legislative Development and Transparency (PILDAT), has weighed in on the situation. He posits that forming a government would be challenging for PTI without entering into alliances with major parties such as the PML-N or PPP, given their current seat count falls short of a majority.

Mehboob also elucidated on the potential for PTI-aligned independents to rejoin the party. This process, however, is contingent on PTI conducting internal elections to reclaim or obtain a new party symbol, a prerequisite for acquiring reserved seats in the National Assembly, as outlined in Rule 94 of the ECP Rules of 2017.

Inline related post44
1 of 3

Furthermore, Mehboob discussed the possibility of these independents aligning with other registered parties, such as the Majlis Wahdat-e-Muslimeen (MWM). Such a move would not only necessitate adherence to the new party’s discipline but could also influence the allocation of reserved seats, potentially adding 25 to 27 seats to their tally, assuming their base remains around 100 seats.

In conclusion, while the PTI and its supported independents face significant hurdles in government formation, the evolving political landscape presents various scenarios. Whether through alliances, rejoining the party, or even forming a government if the initial round of prime minister elections does not yield a majority, the path forward remains complex and multifaceted.

پی ٹی آئی کی حمایت یافتہ حکومت سازی کا عمل حالیہ عام انتخابات کے تناظر میں، پاکستان تحریک انصاف (پی ٹی آئی) کی طرف سے حمایت یافتہ آزاد امیدواروں نے دیگر تمام سیاسی دھڑوں کو پیچھے چھوڑتے ہوئے توقعات سے بڑھ کر کامیابی حاصل کی ہے۔ اس پیش رفت نے ان کی متحد ہونے اور نئی مرکزی حکومت قائم کرنے کی صلاحیت کے بارے میں بڑے پیمانے پر قیاس آرائیوں کو جنم دیا ہے۔ پی ٹی آئی کے اندر ایک اہم شخصیت بیرسٹر گوہر علی خان نے انتخابات کی سالمیت پر تحفظات کا اظہار کرتے ہوئے الزام لگایا ہے کہ نتائج میں ہیرا پھیری پاکستان مسلم لیگ نواز (پی ایم ایل این) کو فائدہ پہنچانے کے لیے کی گئی۔ انہوں نے انکشاف کیا کہ انتخابی چھیڑ چھاڑ کے ان الزامات سے قبل پی ٹی آئی قومی اسمبلی کی 170 نشستیں حاصل کرنے کے لیے تیار تھی۔ پارٹی نے ان شکایات کو دور کرنے کے لیے قانونی ذرائع کا پیچھا کرنے کے اپنے عزم کا اظہار کیا ہے۔ یہ تنازعہ مسلم لیگ (ن) کے نواز شریف کی جیت کے اعلان کے بعد شروع ہوا، جہاں انہوں نے 8 فروری کو ہونے والے انتخابی نتائج کی بنیاد پر اپنی پارٹی کو مرکز اور پنجاب دونوں میں غالب قوت کے طور پر شناخت کیا۔ انتخابات کے بعد میرٹ کا حامل ہے، ان منفرد حالات کو نوٹ کرنا اہم ہے جن میں پی ٹی آئی نے الیکشن میں حصہ لیا۔ پارٹی کو وقت پر اندرونی انتخابات کرانے میں ناکامی کی وجہ سے آزاد امیدوار کھڑا کرنا پڑا، جس کے نتیجے میں اس کا انتخابی نشان ضائع ہو گیا۔ اس وقت، پی ٹی آئی کے حمایت یافتہ آزاد امیدوار قومی اسمبلی میں 100 نشستوں پر قابض ہیں، مسلم لیگ (ن) 73 پر پیچھے ہے، اور پاکستان پیپلز پارٹی (پی پی پی) کے پاس کل 266 میں سے 54 نشستیں ہیں۔ صلاحیت 336 نشستوں تک پھیل گئی، اکثریت کی حد 169 نشستوں پر مقرر۔ پاکستان انسٹی ٹیوٹ آف لیجسلیٹو ڈیولپمنٹ اینڈ ٹرانسپرنسی (پلڈاٹ) کے صدر احمد بلال محبوب نے اس صورتحال پر غور کیا ہے۔ ان کا موقف ہے کہ پی ٹی آئی کے لیے مسلم لیگ ن یا پی پی پی جیسی بڑی جماعتوں کے ساتھ اتحاد کیے بغیر حکومت بنانا مشکل ہو گا، کیونکہ ان کی موجودہ سیٹوں کی گنتی اکثریت سے کم ہے۔

حبوب نے پی ٹی آئی سے منسلک آزاد امیدواروں کے دوبارہ پارٹی میں شامل ہونے کے امکانات کی بھی وضاحت کی۔ تاہم، یہ عمل پی ٹی آئی کی جانب سے پارٹی کے نئے نشان پر دوبارہ دعویٰ کرنے یا حاصل کرنے کے لیے داخلی انتخابات کرانے پر منحصر ہے، جو کہ قومی اسمبلی میں مخصوص نشستوں کے حصول کے لیے ایک شرط ہے، جیسا کہ 2017 کے ای سی پی کے قواعد کے رول 94 میں بیان کیا گیا ہے۔ مزید برآں، محبوب نے ان آزادوں کے دیگر رجسٹرڈ جماعتوں، جیسے مجلس وحدت المسلمین (MWM) کے ساتھ اتحاد کرنے کے امکان پر بات کی۔ اس طرح کے اقدام سے نہ صرف نئی پارٹی کے نظم و ضبط کی پاسداری کی ضرورت پڑے گی بلکہ یہ مخصوص نشستوں کی تقسیم پر بھی اثر انداز ہو سکتی ہے، ممکنہ طور پر ان کی تعداد میں 25 سے 27 سیٹیں شامل ہو جائیں گی، یہ فرض کرتے ہوئے کہ ان کی بنیاد تقریباً 100 سیٹوں پر باقی ہے۔ آخر میں، جب کہ پی ٹی آئی اور اس کے حمایت یافتہ آزاد امیدواروں کو حکومت سازی میں اہم رکاوٹوں کا سامنا ہے، ابھرتا ہوا سیاسی منظرنامہ مختلف منظرنامے پیش کرتا ہے۔ چاہے اتحاد کے ذریعے، پارٹی میں دوبارہ شمولیت، یا یہاں تک کہ حکومت بنانا اگر وزیر اعظم کے انتخابات کے ابتدائی دور میں اکثریت حاصل نہیں ہوتی ہے، آگے کا راستہ پیچیدہ اور کثیر جہتی رہتا ہے۔

Leave a Reply

This website uses cookies to improve your experience. We'll assume you're ok with this, but you can opt-out if you wish. Accept Read More

Discover more from Sports Setup

Subscribe now to keep reading and get access to the full archive.

Continue reading