Sports Setup
Every Thing about Sports

This website uses cookies to improve your experience. We'll assume you're ok with this, but you can opt-out if you wish. Accept Read More

Subhash Chandra’s Journey: A Tale of Ascent and Setbacks - Sports Setup
Sports Setup
Every Thing about Sports

Subhash Chandra’s Journey: A Tale of Ascent and Setbacks

0

Subhash Chandra’s foray into the world of media and business has been a rollercoaster ride, marked by groundbreaking successes and unforeseen challenges.

Inception of Zee: Pioneering Indian Television

Chandra’s journey began with a visionary idea inspired by the Gulf War. Witnessing satellite dishes in big hotels airing CNN, he conceptualized the launch of India’s first private TV channel, Zee. Zee not only introduced a plethora of successful TV shows and reality programs but also played a pivotal role in shaping the careers of numerous media figures. However, this success story took an unexpected turn in the mid-2010s.

Debt Woes and Zee’s Stake Sale

Despite early triumphs, Chandra faced financial hurdles as his new ventures accumulated substantial debt. This compelled him to sell a stake in his crown jewel, Zee, to alleviate the financial strain. The iconic shows like “Hum Paanch” and “Antakshari,” which once defined the landscape of Hindi TV programming, are now cherished memories for nostalgia enthusiasts.

From Entrepreneurship to Infrastructure: The Ill-fated IVRCL Takeover

In 2004, Chandra, ever the risk-taker, ventured into the infrastructure sector. His attempt at a hostile takeover of IVRCL, a company burdened by debt, ended in disappointment. The infrastructure sector, which seemed promising, proved challenging due to a credit crunch, leading to significant losses.

Political Foray and Diversifications

Inline related post44
1 of 3

Chandra’s dynamic career also witnessed a political chapter when he became a Rajya Sabha MP in 2016. Simultaneously, his business empire expanded into diverse sectors, including financial services, education, and gold refineries. However, rapid expansions came at a cost, accumulating a massive debt of ₹17,000 crore across 87 operating companies.

Debt Crisis and Zee’s Downfall

The debt crisis reached a tipping point in 2018, exacerbated by the NBFC IL&FS bankruptcy. Promoters had to pledge shares in listed entities to raise funds, leading to a cascading effect when the market downturn forced them to sell pledged stakes. Zee’s profits dwindled by 48% between 2021 and 2023, triggering regulatory scrutiny.

Current Challenges and Legal Battles

In 2021, Chandra acknowledged his mistakes, settling 91% of his debts with lenders. However, Zee’s dwindling fortunes, failed mergers, and legal battles, including a probe by SEBI into potential money siphoning, have created a challenging landscape for Chandra and his son Puneet Goenka.

As Subhash Chandra navigates this turbulent phase, his journey stands as a testament to the highs and lows that characterize the entrepreneurial spirit.

سبھاش چندر کا سفر: چڑھائی اور ناکامیوں کی کہانی میڈیا اور کاروبار کی دنیا میں سبھاش چندرا کا قدم ایک رولر کوسٹر سواری رہا ہے، جس میں شاندار کامیابیوں اور غیر متوقع چیلنجوں کا نشان ہے۔ Zee کا آغاز: اہم ہندوستانی ٹیلی ویژن چندر کا سفر خلیجی جنگ سے متاثر ایک بصیرت خیال سے شروع ہوا۔ سی این این کو نشر کرنے والے بڑے ہوٹلوں میں سیٹلائٹ ڈشز کا مشاہدہ کرتے ہوئے، انہوں نے ہندوستان کے پہلے نجی ٹی وی چینل، زی کے آغاز کا تصور دیا۔ Zee نے نہ صرف کامیاب ٹی وی شوز اور رئیلٹی پروگراموں کی بہتات متعارف کروائی بلکہ متعدد میڈیا شخصیات کے کیریئر کی تشکیل میں بھی اہم کردار ادا کیا۔ تاہم، اس کامیابی کی کہانی نے 2010 کی دہائی کے وسط میں ایک غیر متوقع موڑ لیا۔ قرض کی پریشانی اور زی کی حصص کی فروخت ابتدائی کامیابیوں کے باوجود، چندر کو مالی رکاوٹوں کا سامنا کرنا پڑا کیونکہ اس کے نئے منصوبوں نے کافی قرض جمع کر لیا تھا۔ اس نے مالی تناؤ کو کم کرنے کے لیے اپنے تاج زیور، زی میں حصہ بیچنے پر مجبور کیا۔ “ہم پانچ” اور “انتاکشری” جیسے مشہور شو، جو کبھی ہندی ٹی وی پروگرامنگ کے منظر نامے کی تعریف کرتے تھے، اب پرانی یادوں کے شوقینوں کے لیے یادگار ہیں۔ انٹرپرینیورشپ سے انفراسٹرکچر تک: بدقسمت IVRCL ٹیک اوور 2004 میں، چندرا، جو کبھی بھی خطرہ مول لینے والے تھے، نے بنیادی ڈھانچے کے شعبے میں قدم رکھا۔ قرض کے بوجھ تلے دبی کمپنی IVRCL کے مخالفانہ قبضے کی اس کی کوشش مایوسی میں ختم ہوئی۔ بنیادی ڈھانچے کا شعبہ، جو امید افزا لگ رہا تھا، کریڈٹ کی کمی کی وجہ سے چیلنجنگ ثابت ہوا، جس سے نمایاں نقصان ہوا۔ سیاسی پیش رفت اور تنوع چندرا کے متحرک کیریئر میں ایک سیاسی باب کا مشاہدہ بھی کیا گیا جب وہ 2016 میں راجیہ سبھا کے رکن بنے۔ اس کے ساتھ ہی، ان کی کاروباری سلطنت متنوع شعبوں میں پھیل گئی، بشمول مالیاتی خدمات، تعلیم، اور گولڈ ریفائنری۔ تاہم، تیزی سے پھیلاؤ لاگت پر آیا، جس نے 87 آپریٹنگ کمپنیوں پر ₹17,000 کروڑ کا بڑا قرض جمع کیا۔ قرض کا بحران اور زی کا زوال NBFC IL&FS دیوالیہ پن کی وجہ سے قرض کا بحران 2018 میں ایک اہم نقطہ پر پہنچ گیا۔ پروموٹرز کو فنڈز اکٹھا کرنے کے لیے لسٹڈ اداروں میں حصص گروی رکھنے پڑتے تھے، جس کا اثر اس وقت ہوا جب مارکیٹ میں مندی نے انہیں گروی رکھے ہوئے حصص فروخت کرنے پر مجبور کیا۔ 2021 اور 2023 کے درمیان Zee کے منافع میں 48% کی کمی واقع ہوئی، جس سے ریگولیٹری جانچ پڑتال شروع ہوئی۔ موجودہ چیلنجز اور قانونی لڑائیاں 2021 میں، چندرا نے اپنی غلطیوں کا اعتراف کرتے ہوئے، قرض دہندگان کے ساتھ اپنے 91% قرضوں کا تصفیہ کیا۔ تاہم، Zee کی کم ہوتی قسمت، ناکام انضمام، اور قانونی لڑائیوں، بشمول SEBI کی جانب سے ممکنہ رقم کی منتقلی کی تحقیقات، نے چندرا اور اس کے بیٹے پونیت گوینکا کے لیے ایک چیلنجنگ منظرنامہ تیار کیا ہے۔ جیسا کہ سبھاش چندر اس ہنگامہ خیز مرحلے پر تشریف لے جاتے ہیں، ان کا سفر ان اونچائیوں اور پستیوں کا ثبوت ہے جو کاروباری جذبے کو نمایاں کرتے ہیں۔

Leave a Reply

This website uses cookies to improve your experience. We'll assume you're ok with this, but you can opt-out if you wish. Accept Read More

Discover more from Sports Setup

Subscribe now to keep reading and get access to the full archive.

Continue reading