Sports Setup
Every Thing about Sports

This website uses cookies to improve your experience. We'll assume you're ok with this, but you can opt-out if you wish. Accept Read More

Rohit Sharma's Remarkable Redemption: A Century Amidst Adversity - Sports Setup
Sports Setup
Every Thing about Sports

Rohit Sharma’s Remarkable Redemption: A Century Amidst Adversity

0

In the third and final T20I at the M.Chinnaswamy Stadium in Bengaluru, Rohit Sharma faced a daunting situation with his side collapsing to 22/4 in less than five overs. The pressure was on, especially considering his recent average T20 record and two consecutive ducks after a 14-month hiatus. However, Rohit responded in a manner befitting his stature, showcasing a perfect blend of caution and aggression that defines his style.

A Peculiar Start on a Two-Paced Wicket

Initially struggling to adapt to the two-paced nature of the wicket, Rohit Sharma took his time, scoring only 27 runs in his first 30 balls. Uncharacteristically, it was the first time in T20Is that he had a strike rate of less than 100 in the initial phase. Despite criticism about his approach, Rohit stuck to his game plan, understanding that patience would yield results, especially with wickets falling around him.

Partnering with Rinku Singh: Turning the Tide

Rinku Singh played a crucial role as a patient and calculated partner. While maintaining an aggressive stance, Singh’s contributions stabilized the innings. Their partnership not only demoralized the Afghanistan team but also added a new chapter to Rohit’s legacy. Together, they accumulated 22 runs off Saleem Safi in the 16th over, followed by impressive overs against Azmatullah Omarzai and Karim Janat, culminating in India finishing at 212/4 from the initial slump of 22/4.

Rohit’s Magic Unleashed

Inline related post44
1 of 3

Rohit Sharma’s magical innings, an unbeaten 121-run knock, showcased his effortless ease in hitting the ball. While acknowledging that such exceptional performances might be outliers, they instill hope in Indian cricket fans, especially with the upcoming World Cup. The event is five months away, and uncertainties about Rohit’s inclusion in the squad remain, dependent on factors like Hardik Pandya’s return in the Indian Premier League.

Legacy Amidst Uncertainties

Regardless of future outcomes, Rohit Sharma’s unbeaten century in Bengaluru stands as a testament to his skill and resilience. Whether it adds to his legacy or not, this innings has undoubtedly rolled back the years for the Indian cricket maestro, leaving fans hopeful for what the future holds.

وہت شرما کا قابل ذکر چھٹکارا: مصیبت کے درمیان ایک صدی بنگلورو کے ایم چناسوامی اسٹیڈیم میں تیسرے اور آخری T20I میں، روہت شرما کو ایک خوفناک صورتحال کا سامنا کرنا پڑا جب اس کی ٹیم پانچ اوورز سے بھی کم وقت میں 22/4 پر سمٹ گئی۔ دباؤ بڑھ رہا تھا، خاص طور پر اس کے حالیہ اوسط T20 ریکارڈ اور 14 ماہ کے وقفے کے بعد لگاتار دو بطخوں پر غور کرنا۔ تاہم، روہت نے اپنے قد کے مطابق انداز میں جواب دیا، احتیاط اور جارحیت کا ایک بہترین امتزاج ظاہر کیا جو اس کے انداز کی وضاحت کرتا ہے۔ دو رفتار والی وکٹ پر ایک عجیب آغاز ابتدائی طور پر وکٹ کی دو رفتار کی نوعیت کے مطابق ڈھالنے کے لیے جدوجہد کرتے ہوئے، روہت شرما نے اپنا وقت نکالا، اپنی پہلی 30 گیندوں پر صرف 27 رنز بنائے۔ غیر معمولی طور پر، یہ T20Is میں پہلی بار تھا کہ ابتدائی مرحلے میں اس کا اسٹرائیک ریٹ 100 سے کم تھا۔ اپنے نقطہ نظر کے بارے میں تنقید کے باوجود، روہت اپنے گیم پلان پر قائم رہے، یہ سمجھتے ہوئے کہ صبر کا نتیجہ نکلے گا، خاص طور پر اس کے ارد گرد وکٹیں گرنے کے ساتھ۔ رنکو سنگھ کے ساتھ شراکت: جوار کا رخ موڑنا رنکو سنگھ نے ایک مریض اور حساب کتاب کے ساتھی کے طور پر اہم کردار ادا کیا۔ جارحانہ موقف برقرار رکھتے ہوئے، سنگھ کی شراکت نے اننگز کو مستحکم کیا۔ ان کی شراکت نے نہ صرف افغانستان کی ٹیم کے حوصلے پست کیے بلکہ روہت کی میراث میں ایک نئے باب کا اضافہ کیا۔ دونوں نے مل کر 16ویں اوور میں سلیم صافی کی گیند پر 22 رنز بنائے، اس کے بعد عظمت اللہ عمرزئی اور کریم جنت کے خلاف متاثر کن اوورز کیے، جس کا اختتام بھارت نے 22/4 کی ابتدائی گراوٹ سے 212/4 پر کیا۔ روہت کا جادو کھل گیا۔ روہت شرما کی جادوئی اننگز، ایک ناقابل شکست 121 رنز کی اننگز، گیند کو مارنے میں ان کی آسانی کا مظاہرہ کرتی ہے۔ اس بات کو تسلیم کرتے ہوئے کہ اس طرح کی غیر معمولی پرفارمنس بہت زیادہ ہو سکتی ہے، وہ ہندوستانی کرکٹ شائقین میں امید پیدا کرتے ہیں، خاص طور پر آنے والے ورلڈ کپ کے ساتھ۔ ایونٹ کو پانچ ماہ باقی ہیں، اور ٹیم میں روہت کی شمولیت کے بارے میں غیر یقینی صورتحال برقرار ہے، جس کا انحصار انڈین پریمیئر لیگ میں ہاردک پانڈیا کی واپسی جیسے عوامل پر ہے۔ غیر یقینی صورتحال کے درمیان میراث مستقبل کے نتائج سے قطع نظر، بنگلورو میں روہت شرما کی ناقابل شکست سنچری ان کی مہارت اور لچک کا ثبوت ہے۔ چاہے اس سے ان کی میراث میں اضافہ ہو یا نہ ہو، اس اننگز نے بلاشبہ ہندوستانی کرکٹ کے استاد کے لیے سال پیچھے کر دیا ہے، جس سے شائقین کو امید ہے کہ مستقبل کیا ہے۔

Leave a Reply

This website uses cookies to improve your experience. We'll assume you're ok with this, but you can opt-out if you wish. Accept Read More

Discover more from Sports Setup

Subscribe now to keep reading and get access to the full archive.

Continue reading