Sports Setup
Every Thing about Sports

This website uses cookies to improve your experience. We'll assume you're ok with this, but you can opt-out if you wish. Accept Read More

PPP Backs PML-N's Candidate for Prime Ministerial Role, Confirms Bilawal - Sports Setup
Sports Setup
Every Thing about Sports

PPP Backs PML-N’s Candidate for Prime Ministerial Role, Confirms Bilawal

0

In a recent announcement, Bilawal Bhutto Zardari, the Chairman of the Pakistan Peoples Party (PPP), declared the party’s decision to support the Pakistan Muslim League-Nawaz (PML-N) in their nomination for the prime minister’s position. This declaration came after a crucial meeting of the PPP’s Central Executive Committee (CEC) held in Islamabad.

Bilawal emphasized the PPP’s intention to abstain from seeking federal ministries, acknowledging the election outcomes for the greater national interest despite having reservations. “Our priority is to avoid pushing the nation towards another electoral exercise, as it would only detract from our country’s progress,” he remarked, highlighting the potential damage of recurring elections.

Addressing the press, Bilawal underscored the importance of unity among political factions to overcome the electoral system’s flaws. “It is essential for all political entities to come together to rectify these issues, ensuring a transparent electoral process in the future,” he stated, pointing out the party’s plan to leverage forums like the Election Commission of Pakistan (ECP) and parliament to address these concerns.

Bilawal explicitly stated his decision not to pursue the prime ministerial candidacy, citing the PML-N and independent candidates’ majority at the Centre as a strategic choice. He detailed the PPP’s rationale behind supporting the PML-N, noting the absence of coalition possibilities with other parties, particularly the PTI.

Moreover, Bilawal expressed a personal wish for his father, Asif Ali Zardari, to assume the presidency, considering him a unifying figure capable of stabilizing the country’s tumultuous political landscape.

Inline related post44
1 of 3

Concluding his statement, Bilawal reassured the public of the PPP’s commitment to constructive political engagement, emphasizing the parliament’s role as a platform for addressing the people’s concerns.

The announcement followed intensive discussions within the PPP CEC, co-chaired by Asif Ali Zardari and Bilawal Bhutto Zardari, focusing on strategic alignments post the inconclusive elections on February 8. These discussions underscored the PPP and PML-N’s collaborative efforts to establish a central government, alongside maneuvers to secure governance in Punjab and Balochistan, reflecting a concerted effort to navigate the complexities of Pakistan’s political arena.

پی پی پی نے وزارت عظمیٰ کے لیے مسلم لیگ ن کے امیدوار کی حمایت کی، بلاول کی تصدیق ایک حالیہ اعلان میں، پاکستان پیپلز پارٹی (پی پی پی) کے چیئرمین بلاول بھٹو زرداری نے وزیر اعظم کے عہدے کے لیے نامزدگی میں پاکستان مسلم لیگ نواز (پی ایم ایل این) کی حمایت کرنے کے پارٹی کے فیصلے کا اعلان کیا۔ یہ اعلان پیپلز پارٹی کی سینٹرل ایگزیکٹو کمیٹی (CEC) کے اسلام آباد میں ہونے والے اہم اجلاس کے بعد کیا گیا۔ بلاول نے تحفظات کے باوجود قومی مفاد کے لیے انتخابی نتائج کو تسلیم کرتے ہوئے وفاقی وزارتوں کے حصول سے گریز کرنے کے پی پی پی کے ارادے پر زور دیا۔ “ہماری ترجیح یہ ہے کہ قوم کو کسی اور انتخابی مشق کی طرف دھکیلنے سے گریز کیا جائے، کیونکہ یہ صرف ہمارے ملک کی ترقی کو روکے گا،” انہوں نے بار بار ہونے والے انتخابات کے ممکنہ نقصان کو اجاگر کرتے ہوئے کہا۔ پریس سے خطاب کرتے ہوئے بلاول بھٹو نے انتخابی نظام کی خامیوں کو دور کرنے کے لیے سیاسی دھڑوں کے درمیان اتحاد کی اہمیت پر زور دیا۔ “تمام سیاسی اداروں کے لیے ضروری ہے کہ وہ ان مسائل کو حل کرنے کے لیے اکٹھے ہوں، مستقبل میں شفاف انتخابی عمل کو یقینی بنائیں،” انہوں نے الیکشن کمیشن آف پاکستان (ECP) اور پارلیمنٹ جیسے فورمز کو حل کرنے کے لیے پارٹی کے منصوبے کی طرف اشارہ کرتے ہوئے کہا۔ ان خدشات. بلاول نے واضح طور پر وزارت عظمیٰ کی امیدواری کا پیچھا نہ کرنے کے اپنے فیصلے کو واضح طور پر بیان کیا، مرکز میں مسلم لیگ ن اور آزاد امیدواروں کی اکثریت کو ایک سٹریٹجک انتخاب قرار دیا۔ انہوں نے مسلم لیگ (ن) کی حمایت کے پیچھے پی پی پی کے استدلال کو تفصیل سے بتایا، دوسری جماعتوں بالخصوص پی ٹی آئی کے ساتھ اتحاد کے امکانات کی عدم موجودگی کو نوٹ کیا۔ مزید برآں، بلاول نے اپنے والد آصف علی زرداری سے صدارت سنبھالنے کی ذاتی خواہش کا اظہار کیا، انہیں ایک متحد شخصیت سمجھتے ہوئے جو ملک کے ہنگامہ خیز سیاسی منظر نامے کو مستحکم کرنے کے قابل ہے۔ اپنے بیان کے اختتام پر، بلاول نے عوام کو تعمیری سیاسی مشغولیت کے لیے پی پی پی کے عزم کا یقین دلایا، عوام کے تحفظات کو دور کرنے کے لیے ایک پلیٹ فارم کے طور پر پارلیمنٹ کے کردار پر زور دیا۔ یہ اعلان پی پی پی سی ای سی کے اندر گہری بات چیت کے بعد ہوا، جس کی مشترکہ صدارت آصف علی زرداری اور بلاول بھٹو زرداری نے کی، جس میں 8 فروری کو غیر نتیجہ خیز انتخابات کے بعد اسٹریٹجک صف بندیوں پر توجہ دی گئی۔ پنجاب اور بلوچستان میں حکمرانی کو محفوظ بنانے کے لیے تدبیروں کے ساتھ ساتھ، پاکستان کے سیاسی میدان کی پیچیدگیوں کو نیویگیٹ کرنے کے لیے ایک ٹھوس کوشش کی عکاسی کرتا ہے۔

Leave a Reply

This website uses cookies to improve your experience. We'll assume you're ok with this, but you can opt-out if you wish. Accept Read More

Discover more from Sports Setup

Subscribe now to keep reading and get access to the full archive.

Continue reading