Sports Setup
Every Thing about Sports

This website uses cookies to improve your experience. We'll assume you're ok with this, but you can opt-out if you wish. Accept Read More

PML-N Emerges as Majority Party in Balochistan Assembly - Sports Setup
Sports Setup
Every Thing about Sports

PML-N Emerges as Majority Party in Balochistan Assembly

0

The political landscape in Balochistan shifted significantly on Tuesday as the Pakistan Muslim League-Nawaz (PML-N) solidified its majority status in the provincial assembly. This development came after two independent members of the assembly decided to join the PML-N, bringing the party’s total seat count in Balochistan to 12.

The new additions to the PML-N were independent MPAs Wali Muhammad from the constituency PB-41 Quetta-IV and Abdul Khaliq from PB-51 Chaman. Their decision was announced following a meeting in Lahore with PML-N President Shehbaz Sharif, who is also the party’s candidate for prime minister.

The meeting was attended by key figures including the PML-N’s provincial leader, Sheikh Jaffar Khan Mandokhail, and Jamal Shah Kakar. Their joining was hailed by Shehbaz Sharif, who emphasized the positive impact of their decision on Pakistan’s stability.

Shehbaz Sharif praised the new members for their commitment to Pakistan’s progress, highlighting the importance of stability in the nation’s political environment. He advocated for constructive dialogue and teamwork as essential tools for overcoming Pakistan’s challenges.

Additional Independents Align with PML-N

This trend of independents joining the PML-N was further evidenced on Sunday when Mir Mohammad Asim Kurd Gello, from Kachhi’s PB-12 constituency, aligned with the party. Shehbaz Sharif expressed gratitude towards Gello and his colleagues for choosing to support the PML-N, noting their dedication to the country’s development.

Gello, in response, acknowledged the significant contributions of PML-N leader Nawaz Sharif and the party to the development of Pakistan and Balochistan. He shared his vision for Balochistan’s advancement in education, healthcare, and overall growth.

Inline related post44
1 of 3

Current Assembly Composition and Future Expectations

The latest composition of the Balochistan Assembly sees the JUI-F and PPP each holding 11 seats, followed by the BAP with four seats, independents with four seats, the National Party with three, ANP with two, and one seat each for the BNP-Awami, Haq Do Tehreek, and Jamaat-e-Islami. It is anticipated that the remaining independent members will join a party shortly, further altering the assembly’s dynamics.

In a move to strengthen political alliances, former Balochistan Chief Minister and PML-N leader Jam Kamal Khan announced initiatives to engage with independent members and other parties to form a coalition government in the province.

In a related development, independent MPA Bakht Muhammad Kakar, victor from PB-39 Quetta-II, joined the Pakistan Peoples Party after a meeting with PPP Co-chairman Asif Ali Zardari in Islamabad. This indicates the formation of a potential coalition government in Balochistan, with leadership expected to be shared between the PML-N and PPP during the government’s tenure.

مسلم لیگ ن بلوچستان اسمبلی میں اکثریتی جماعت بن کر ابھری۔ منگل کو بلوچستان میں سیاسی منظر نامے میں نمایاں تبدیلی آئی کیونکہ پاکستان مسلم لیگ نواز (پی ایم ایل این) نے صوبائی اسمبلی میں اپنی اکثریتی حیثیت کو مستحکم کر لیا۔ یہ پیش رفت اس وقت ہوئی جب دو آزاد اراکین اسمبلی نے مسلم لیگ ن میں شمولیت کا فیصلہ کیا، جس سے بلوچستان میں پارٹی کی کل نشستوں کی تعداد 12 ہو گئی۔ مسلم لیگ (ن) میں نئے شامل ہونے والوں میں حلقہ پی بی 41 کوئٹہ IV سے آزاد ایم پی اے ولی محمد اور پی بی 51 چمن سے عبدالخالق شامل ہیں۔ ان کے فیصلے کا اعلان مسلم لیگ ن کے صدر شہباز شریف سے لاہور میں ملاقات کے بعد کیا گیا، جو پارٹی کے وزارت عظمیٰ کے امیدوار بھی ہیں۔ اجلاس میں مسلم لیگ ن کے صوبائی رہنما شیخ جعفر خان مندوخیل اور جمال شاہ کاکڑ سمیت اہم شخصیات نے شرکت کی۔ ان کی شمولیت کو شہباز شریف نے سراہا، جنہوں نے پاکستان کے استحکام پر ان کے فیصلے کے مثبت اثرات پر زور دیا۔ شہباز شریف نے ملک کے سیاسی ماحول میں استحکام کی اہمیت کو اجاگر کرتے ہوئے پاکستان کی ترقی کے لیے نئے اراکین کے عزم کی تعریف کی۔ انہوں نے تعمیری بات چیت اور ٹیم ورک کو پاکستان کے چیلنجوں پر قابو پانے کے لیے ضروری ہتھیار کے طور پر آگے بڑھانے کی وکالت کی۔ اضافی آزاد امیدواروں نے مسلم لیگ ن کے ساتھ اتحاد کیا۔ آزاد امیدواروں کے مسلم لیگ ن میں شامل ہونے کے اس رجحان کا مزید ثبوت اتوار کو اس وقت ملا جب کچھی کے حلقہ پی بی 12 سے میر محمد عاصم کرد گیلو نے پارٹی سے اتحاد کیا۔ شہباز شریف نے ملکی ترقی کے لیے ان کی لگن کو نوٹ کرتے ہوئے مسلم لیگ (ن) کی حمایت کا انتخاب کرنے پر گیلو اور ان کے ساتھیوں کا شکریہ ادا کیا۔ گیلو نے جواب میں پاکستان اور بلوچستان کی ترقی میں مسلم لیگ (ن) کے قائد نواز شریف اور پارٹی کی نمایاں خدمات کا اعتراف کیا۔ انہوں نے تعلیم، صحت کی دیکھ بھال اور مجموعی ترقی میں بلوچستان کی ترقی کے لیے اپنے وژن کا اشتراک کیا۔ موجودہ اسمبلی کی ساخت اور مستقبل کی توقعات بلوچستان اسمبلی کی تازہ ترین تشکیل کے مطابق جے یو آئی-ایف اور پی پی پی کے پاس 11 نشستیں ہیں، اس کے بعد بی اے پی کے پاس چار، آزاد امیدوار چار، نیشنل پارٹی تین، اے این پی دو اور بی این پی کے پاس ایک ایک نشست ہے۔ عوامی، حق دو تحریک، اور جماعت اسلامی۔ یہ توقع کی جا رہی ہے کہ بقیہ آزاد اراکین جلد ہی کسی پارٹی میں شامل ہو جائیں گے، جس سے اسمبلی کی حرکیات میں مزید تبدیلی آئے گی۔ سیاسی اتحاد کو مضبوط کرنے کے اقدام میں، بلوچستان کے سابق وزیر اعلیٰ اور مسلم لیگ (ن) کے رہنما جام کمال خان نے صوبے میں مخلوط حکومت بنانے کے لیے آزاد اراکین اور دیگر جماعتوں کے ساتھ مل کر کام کرنے کا اعلان کیا۔ ایک متعلقہ پیش رفت میں، PB-39 کوئٹہ II سے کامیاب آزاد ایم پی اے بخت محمد کاکڑ نے اسلام آباد میں پی پی پی کے شریک چیئرمین آصف علی زرداری سے ملاقات کے بعد پاکستان پیپلز پارٹی میں شمولیت اختیار کر لی۔ یہ بلوچستان میں ممکنہ مخلوط حکومت کے قیام کی طرف اشارہ کرتا ہے، جس میں حکومت کے دور میں مسلم لیگ (ن) اور پی پی پی کے درمیان قیادت کا اشتراک متوقع ہے۔

Leave a Reply

This website uses cookies to improve your experience. We'll assume you're ok with this, but you can opt-out if you wish. Accept Read More

Discover more from Sports Setup

Subscribe now to keep reading and get access to the full archive.

Continue reading