Sports Setup
Every Thing about Sports

This website uses cookies to improve your experience. We'll assume you're ok with this, but you can opt-out if you wish. Accept Read More

Missed Opportunities for Pakistan: Shaheen's Impact Falters at MCG - Sports Setup
Sports Setup
Every Thing about Sports

Missed Opportunities for Pakistan: Shaheen’s Impact Falters at MCG

0

In the wake of a 0-1 deficit in the series, the Melbourne Cricket Ground (MCG) set the stage for Pakistan’s redemption. The decision to bowl first by skipper Shan Masood seemed promising, especially with the favorable conditions for Pakistan’s pace-heavy bowling unit. The absence of a specialist spinner indicated Shaheen Afridi’s clear strategy to exploit any weaknesses in the Australian lineup.

Struggles in the Field: Shafique’s Mishap and Hamza’s Pressure

Despite Mir Hamza’s commendable efforts to apply pressure on the Australian batsmen, a dropped catch by Abdullah Shafique marred Pakistan’s chances. The missed opportunity allowed the Australian opening partnership to flourish, contributing to their eventual score of 187/3.

Shaheen Afridi’s Threatening Spell: Unfulfilled Potential

Shaheen Afridi, backed by conducive conditions for pacers, displayed a threatening spell. Despite a loose start, he gained confidence and nearly drew an edge from left-handed David Warner. Shaheen’s tightly-knit grouping during his initial spell forced false shots from in-form Australian batters, Warner and Usman Khawaja. Unfortunately, a missed catch by Shafique and an absence of wickets in subsequent spells were setbacks for Shaheen.

Labuschagne’s Resilience and Smith’s Struggles: A Tale of Two Batsmen

Inline related post44
1 of 2

Marnus Labuschagne showcased resilience against deliveries outside the off-stump, defying Pakistan’s plan to exploit his vulnerability in that area. Meanwhile, Steve Smith’s 26 off 75 balls added to his struggles in converting starts into substantial scores, contributing to a disappointing year for the Australian vice-captain.

Bowling Tactics Under Scrutiny: Lack of Consistency from Pakistan Pacers

Questions arose regarding Pakistan’s bowling tactics, particularly the decision to not pitch the ball fuller. Despite bowling a modest 13% of deliveries in that range, inconsistency and a lack of deliveries above 140 kmph allowed Australian batters to comfortably leave the ball. The Pakistani pacers’ erratic grouping on day one highlighted the missed opportunities to trouble the Australians, emphasizing the need for a more focused approach.

In summary, Pakistan’s missed opportunities at the MCG, characterized by dropped catches and a lack of wickets, underscored the challenges faced by the visitors in turning the tide in the series.

پاکستان کے لیے کھوئے ہوئے مواقع: ایم سی جی میں شاہین کا اثر ناکام ہو گیا۔ سیریز میں 0-1 کے خسارے کے بعد، میلبورن کرکٹ گراؤنڈ (MCG) نے پاکستان کو چھڑانے کا مرحلہ طے کیا۔ کپتان شان مسعود کی طرف سے پہلے باؤلنگ کرنے کا فیصلہ امید افزا لگ رہا تھا، خاص طور پر پاکستان کی تیز رفتار بولنگ یونٹ کے لیے سازگار حالات کے باعث۔ ماہر اسپنر کی عدم موجودگی نے آسٹریلوی لائن اپ میں کسی بھی کمزوری کا فائدہ اٹھانے کے لیے شاہین آفریدی کی واضح حکمت عملی کا اشارہ دیا۔ میدان میں جدوجہد: شفیق کا حادثہ اور حمزہ کا دباؤ آسٹریلوی بلے بازوں پر دباؤ ڈالنے کے لیے میر حمزہ کی قابل ستائش کوششوں کے باوجود، عبداللہ شفیق کے ڈراپ کیے گئے کیچ نے پاکستان کے امکانات کو خراب کردیا۔ ضائع ہونے والے موقع نے آسٹریلوی اوپننگ پارٹنرشپ کو پھلنے پھولنے کا موقع دیا، جس نے ان کے 187/3 کے حتمی اسکور میں اہم کردار ادا کیا۔ شاہین آفریدی کا دھمکی آمیز جادو: نامکمل امکان شاہین آفریدی نے پیسرز کے لیے سازگار حالات کی حمایت کرتے ہوئے ایک خطرناک اسپیل کا مظاہرہ کیا۔ ڈھیلے آغاز کے باوجود، اس نے اعتماد حاصل کیا اور بائیں ہاتھ کے ڈیوڈ وارنر سے تقریباً ایک برتری حاصل کی۔ اپنے ابتدائی اسپیل کے دوران شاہین کی مضبوطی سے گروپ بندی نے فارم میں آسٹریلوی بلے بازوں، وارنر اور عثمان خواجہ سے جھوٹے شاٹس لینے پر مجبور کیا۔ بدقسمتی سے، شفیق کا ایک چھوٹا کیچ اور اس کے بعد کے اسپیل میں وکٹوں کی عدم موجودگی شاہین کے لیے دھچکے کا باعث بنی۔ لیبسچین کی لچک اور اسمتھ کی جدوجہد: دو بلے بازوں کی کہانی مارنس لیبوشگن نے آف سٹمپ سے باہر ڈیلیوری کے خلاف لچک کا مظاہرہ کیا، اس علاقے میں اپنی کمزوری سے فائدہ اٹھانے کے پاکستان کے منصوبے کی نفی کی۔ دریں اثنا، اسٹیو اسمتھ کے 75 گیندوں پر 26 رنز نے آغاز کو کافی اسکور میں تبدیل کرنے میں ان کی جدوجہد میں اضافہ کیا، جس نے آسٹریلیا کے نائب کپتان کے لیے ایک مایوس کن سال کا کردار ادا کیا۔ باؤلنگ کی حکمت عملی جانچ پڑتال کے تحت: پاکستانی پیسرز کی جانب سے مستقل مزاجی کا فقدان پاکستان کی گیند بازی کی حکمت عملی، بالخصوص گیند کو فلر پچ نہ کرنے کے فیصلے کے حوالے سے سوالات اٹھے۔ اس رینج میں معمولی 13 فیصد گیندیں کرنے کے باوجود، عدم مطابقت اور 140 کلومیٹر فی گھنٹہ سے زیادہ کی ترسیل کی کمی نے آسٹریلوی بلے بازوں کو آرام سے گیند چھوڑنے کا موقع دیا۔ پہلے دن پاکستانی تیز گیند بازوں کی بے ترتیب گروپنگ نے زیادہ توجہ مرکوز کرنے کی ضرورت پر زور دیتے ہوئے آسٹریلوی کھلاڑیوں کو پریشان کرنے کے ضائع ہونے والے مواقع کو اجاگر کیا۔ خلاصہ یہ کہ ایم سی جی میں پاکستان کے ضائع ہونے والے مواقع، جن کی خصوصیت گرائے گئے کیچز اور وکٹوں کی کمی ہے، نے سیریز کا رخ موڑنے میں مہمانوں کو درپیش چیلنجوں کی نشاندہی کی۔

Leave a Reply

This website uses cookies to improve your experience. We'll assume you're ok with this, but you can opt-out if you wish. Accept Read More

Discover more from Sports Setup

Subscribe now to keep reading and get access to the full archive.

Continue reading